انفارمیشن ٹیکنالوجی کا فروغ حکومت کی اولین ترجیح ہے ….وزیرِ اعظم عمران خان

وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت ملک میں انفارمیشن ٹیکنالوجی  کے فروغ کے حوالے سے اجلاس
چئیرمین ایف بی آر کو ہدایت کی کہ آئی ٹی سیکٹر سے وابستہ کمپنیوں کو ٹیکس کے حوالے سے درپیش مسائل کا ترجیحی بنیادوں پر جائزہ لیکر ان کےحل کو یقینی بنایا جائے۔
اجلاس میں وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی سید امین الحق، وزیر اطلاعات سینٹر شبلی فراز،  وزیرِ صنعت محمد حماد اظہر، مشیران ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ،  ڈاکٹر عشرت حسین،  عبدالرزاق داؤد،  معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل، وفاقی سیکرٹری صاحبان، چئیرمین ایف بی آر، گورنر سٹیٹ بنک  اور آئی ٹی سیکٹر سے تعلق رکھنے والی مختلف کمپنیوں کے نمائندگان شریک
وزیرِ اعظم کو آئی ٹی سیکٹر کا ملکی معیشت میں کردار، شعبے میں ملکی برآمدات، اور شعبے کے فروغ کے حوالے سے درپیش رکاوٹوں پر تفصیلی بریفنگ
اجلاس کو بتایا گیا کہ  موجودہ حکومت کی ہدایات کی روشنی میں سٹیٹ بنک کی جانب سے  فری لانسرز کے معاوضے کی حد پانچ ہزار ڈالر ماہانہ سے بڑھا کر پچیس ہزار ڈالر کر دی گئی ہے۔  وزارتِ انفارمیشن ٹیکنالوجی  کی جانب سے صنعت اور شعبے سے متعلقہ اسٹیک ہولڈرز سے روابط کا مربوط نظام وضع کیا گیا ہے۔ رائٹ آف وے پالیسی حتمی مراحل میں ہے جسے بہت جلد کابینہ میں منظوری کے لئے پیش کر دیا جائے گا۔
وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ مالی سال 2019-20میں آئی ٹی سروسز کی مد میں برآمدات 1.23ارب ڈالر ریکارڈ کی گئییں جو کہ اس سے پہلے 995ملین ڈالر تھیں۔ اس ضمن میں 23.7فیصد کا اضافہ سامنے آیا ہے۔ وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ وزارت کی جانب سے آئی ٹی شعبے کے  حوالے سے آئیندہ تین سالوں کے لیے پانچ ارب ڈالر کی برآمدات کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ آئی ٹی سیکٹر کے حوالے سے ٹیکس میں کمی لانے کی تجاویز پر کام جاری ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ  پاکستانی سفارت خانوں کی معاونت سے آئی ٹی سیکٹر کے فروغ کے لئے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔
وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ مارکیٹ کی ضروریات کو مد نظر رکھتے ہوئے نوجوانوں کے آئی ٹی کےحوالے سے سکل ٹریننگ پروگرام کا اجراء کیا گیا ۔ تعلیمی اداروں ، صنعتی شعبے اور حکومتی اداروں کے درمیان  موثر ربط کے لئے پورٹل تشکیل دے دیا گیا ہے ۔ ڈیجی سکلز ٹریننگ پروگرام کے تحت بارہ لاکھ نوجوانوں کو تربیت دی جا چکی ہے۔ شعبے سے منسلک افراد کی حوصلہ افزائی کے لئے آئی ٹی ایکسپورٹ ایوارڈ کا انعقاد کیا گیا۔ اسلام آباد میں آئی ٹی پارک بن چکا ہے جبکہ کراچی میں آئی ٹی پارک کے قیام کا منصوبہ منظوری کے مراحل میں ہے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ پانچ نیشنل انکیوبیشن سنٹرز سے 159 سٹارٹ اپس اپنی تربیت مکمل کر چکے ہیں۔
اجلاس میں موجود مختلف آئی ٹی کمپنیوں کے نمائندگان نے شعبے کے فروغ کے لئے تجاویز پیش کیں
وزیرِ اعظم نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے  کہا کہ ملک کے نوجوانوں میں آئی ٹی کے شعبے میں بے انتہا صلاحیت موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ شعبے کے فروغ سے نہ صرف نوجوانوں کو اپنی صلاحیتوں کو برؤے کار لانے میں مدد ملے گی اور نوکریوں کے مواقع پیدا ہوں گے بلکہ اس سے ملکی برآمدات میں اضافہ ممکن ہوگا۔ وزیرِ اعظم نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ آئی ٹی شعبے کا فروغ حکومت کی اولین ترجیح ہے اور اس حوالے سے ہر ممکن اقدامات اٹھائے جائیں گے۔ وزیرِ اعظم نے چئیرمین ایف بی آر کو ہدایت کی کہ آئی ٹی سیکٹر سے وابستہ کمپنیوں کو ٹیکس کے حوالے سے درپیش مسائل کا ترجیحی بنیادوں پر جائزہ لیکر ان کےحل کو یقینی بنایا جائے۔
-بڑے شہروں میں آئی ٹی کلسٹرز بنانے کی تجویز سے اتفاق کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نے متعلقین کو ہدایت کی کہ اس  تجویز کو حتمی شکل دی جائے

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.