آن لائن پورٹل کا اجرا، خواہشمند شہری کوئی بھی تعمیراتی منصوبہ شروع کرنے کے لیے آن لائن درخواست دے سکے گا

اسلام آباد (ویب ڈیسک )

وزیر اعظم عمران خان نے گھروں کی تعمیرمیں سرمایہ کاروں کو ترغیب دینے کے لیے جامع پلان مرتب کرنے کی ہدایت کردی۔ جمعہ کو وزیراعظم کی زیر صدارت قومی رابطہ کمیٹی برائے ہاؤسنگ و تعمیرات کا اجلاس ہوا۔خیبر پختونخوا، سندھ، بلوچستان، آزاد جموں و کشمیر اور گلگت بلتستان کے چیف سیکریٹریز نے بھی ویڈیو لنک کے ذریعے شرکت کی۔چیف سیکریٹری سندھ اور خیبر پختونخوا نے عوامی سہولت کے لیے قائم کردہ ون ونڈو آن لائن پورٹل کے اجرا کے حوالے سے بریفنگ دی۔ اجلاس کو آگاہ کیا گیا کے اس پورٹل کے اجرا سے کوئی بھی خواہشمند شہری کوئی بھی تعمیراتی منصوبہ شروع کرنے کے لیے آن لائن درخواست دے سکے گا۔ اس پورٹل سے انسانی مداخلت کم سے کم ہو گی اور ہر موقع پر درخواست میں پیش رفت کا پتہ چل سکے گا۔ مزید اس پورٹل سے متعلقہ افسران کی کارکردگی متعین کرنے کا موقع بھی ملے گا۔وزیرِ اعظم نے سندھ اور خیبرپختونخوا کی جانب سے آن لائن پورٹل کے اجرا کو سراہا۔ وزیرِ اعظم کو راوی ریور فرنٹ اربن ڈیویلپمنٹ پراجیکٹ کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی ۔وزیر اعظم نے اس امر پر زور دیا کے تعمیرات سیکٹر میں سرمایہ کاری کرنے والوں کو ہر قسم کی آسانیاں فراہم کی جائیں تاکہ زیادہ سے زیادہ افراد اس شعبے میں دی جانے والی مراعات سے مستفید ہوں۔ آن لائن پورٹل کے اجرا سے اس حوالے سے مدد ملے گی۔

وزیراعظم نے راوی ریورفرنٹ اربن ڈیویلپمنٹ پراجیکٹ کے حوالے سے کہا کے یہ لاہور کے لیے بہت اہم منصوبہ ہے۔ لاہور کی آلودگی کو کم کرنے اور مستقبل کی رہائشی ضروریات کو پورا کرنے میں مدد دے گا۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ منصوبہ مقررہ مدت اور لاگت میں مکمل کیا جائے۔ اس منصوبے کی تکمیل میں مقامی افراد ی قوت اور وسائل کو بروئے کار لایا جائے۔ سرمایہ کاروں کو ترغیب دینے کے لیے جامع پلان مرتب کیا جائے۔اجلاس میں وفاقی وزرا سینیٹر شبلی فراز، حماد اظہر، گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر ، وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان بزدار، پنجاب کے صوبائی وزیر میاں محمود الرشید، مشیرڈاکٹر سلمان شاہ، چیف سیکریٹری پنجاب، وائس چیرمین ایل ڈی اے  اور سینئر افسران اجلاس میں شریک ہوئے ۔ویڈیو لنک کے ذریعے معاون خصوصی ملک امین اسلم، چیرمین ایف بی ار، وفاقی سیکریٹریز برائے ہاوسنگ، منصوبہ بندی، توانائی، پیٹرولیم، قانون، چیئرمین سی ڈی اے بھی  شریک ہوئے۔

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.