بھارت کا پاکستان پر ہندوستان اور وزیر اعظم مودی کے خلاف سائبر جنگ کے آغاز کا الزام

دہلی(ساوتھ ایشین وائر )بھارتی حکومت کو دیئے گئے ایک جائزے کے مطابق ، پاکستان پر الزام لگایا گیا ہے کہ بھارت میں اسلامو فوبیا پر جھوٹے پروپیگنڈا پھیلاتے ہوئے خاص طور پر خلیجی ممالک میں ، بھارت مخالف جذبات کو ہوا دینے کے لئے سوشل میڈیا پر ایک جنگ کا آغاز کردیا گیا ہے۔ ساوتھ ایشین وائر کے مطابق ہندوستانی سکیورٹی ایجنسیوں نے سوشل میڈیا پیغامات میں اضافے کو ہندوستان اور وزیر اعظم نریندر مودی کو نشانہ بنانے والی مربوط کوشش سے جوڑ دیا ہے جس کا الزام پاکستانی انٹیلی جنس پر لگایا گیاہے۔اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی ایجنسیاں ہندوستان اور مشرق وسطی کے ساتھ تعلقات کو گہرا کرنے کے لئے بھاری سرمایہ کاری کرنے والے وزیر اعظم مودی پر خلیج میں قریبی اتحادیوں کے مابین فرقہ واریت پھیلانے کی کوشش کر رہی ہیں۔
نارتھ بلاک کے جائزے میں پاکستان اور خلیجی ممالک میں مقیم ٹرول ہینڈلز کی ایک لمبی فہرست شامل کی گئی ہے جو اس مقصد کے حصول کے لئے استعمال ہورہی ہے۔نئی دہلی کو نشانہ بنانے والے سوشل میڈیا پیغامات میں اضافہ پہلے نہیں ہے۔ساوتھ ایشین وائر کے مطابق سیکیورٹی عہدیداروں نے گذشتہ سال اسی طرح کا اضافہ دیکھا تھا جب مقبوضہ جموں و کشمیر میں گذشتہ اگست میں مواصلاتی لاک ڈان نافذ کر دیا تھا۔ساوتھ ایشین وائر کے مطابق ایک سرکاری عہدیدار نے بھارتی میڈیا کو بتایا کہ اس معاملے میں نیا کام یہ ہے کہ جعلی پروپیگنڈے کے منظم ایجنڈے کو مرتب کرنے کے لئے خلیجی ممالک میں ممتاز شخصیات کا استعمال کیا جائے۔
وزیر اعظم مودی کو نشانہ بنانے والی اس مہم کا مقصد ہندوستان میں مسلم افراد کو ہراساں کرنے کے واقعات کے ویڈیو کلپس کو منظم طریقے سے ذریعے چلایا گیا۔رپورٹ میں کہا گیا کہ سیکورٹی ایجنسیوں کے تجزیہ میں بہت سارے ٹویٹرہینڈل جن کی درجہ بندی اسپریڈر کے طور پر کی گئی ہے وہ بھی پاکستان میں مقیم ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ خلیجی ممالک بحرین ، کویت ، عمان ، قطر ، سعودی عرب ، اور متحدہ عرب امارات میں بھی ان پوسٹس کا پھیلاوموجود ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ سب پرانے لیکن غیر تصدیق شدہ ٹویٹر ہینڈل ہیں۔

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.